پی آئی سی لاہوردوسرے روزبھی بند

لاہور(ویب ڈیسک): دل کا ہسپتال دو دن بعد بھی فعال نہ ہوسکا، ایمرجنسی اور آؤٹ ڈور بدستور بند ہیں، ہزاروں مریض متاثر ہو رہے ہیں، خوف میں مبتلا عملہ بھی ڈیوٹی پر واپس نہ آیا۔
پنجاب انسٹی ٹیوٹ آف کارڈیالوجی تیسرے روز بھی بند رہا، مریضوں کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑا، اب تک تقریباً 12 ہزار دل کے مریض متاثر ہو چکے، 35 کے قریب بائی پاس، 200 انجیو پلاسٹی اور 250 کے قریب انجیوگرافی نہ ہو سکیں، دل کے مریض تشخیصی ٹیسٹوں سے بھی محروم رہے۔ دوسری جانب پی آئی سی او پی ڈی میں میڈیسن کاؤنٹر بھی بحال کر دیا گیا ہے اور انتہائی نگہداشت یونٹ میں پہلے سے زیر علاج مریضوں کو ادویات کی فراہمی بھی شروع کر دی گئی ہے۔ پی آئی سی کے چیف ایگزیکٹو آفیسر پروفیسر ڈاکٹر ثاقب شفیع نے بتایا کہ رات 8 بجے ایمرجنسی سمیت ہسپتال کو مکمل فعال کر دیا جائے گا جبکہ او پی ڈی کل سے کھلے ہو گی۔ گرینڈ ہیلتھ الائنس کے زیر اہتمام آج سیف پی آئی سی کے نام سے مہم شروع کی جائے گی، جاں بحق ہونے والوں کیلئے فاتحہ خوانی اور شمعیں روشن کی جائیں گی۔ پی آئی سی میں پولیس کی بھاری نفری اور رینجرز کو تعینات ہے۔
پنجاب حکومت نے بڑا اعلان کرتے ہوئے کہا پی آئی سی میں وکلاء کے حملے میں تباہ شدہ گاڑیوں کا ازالہ کیا جائے گا۔وکلاء حملے میں تباہ ہونے والی 8 سو سی سی گاڑیوں کو 50 ہزار، ہزار سی سی گاڑیوں کو 75 ہزار، 13 سو سی سی کو ڈیڑھ لاکھ اور 16 سو سی سی کو 2 لاکھ دینے کا فیصلہ کیا گیا ہے، حملے میں تباہ شدہ 22 مختلف گاڑیوں کو تاحال لسٹ میں شامل کیا گیا ہے۔ ہسپتال انتظامیہ کی جانب سے گاڑیوں کے مالکان کو گاڑی کی تصویر اور شناختی کارڈ جمع کرانے ہدایات جاری کر دی گئی ہیں، ڈاکٹرز و دیگر عملے نے گاڑیوں کے نقصان کا ازالہ کرنے پر خوشی کا اظہار کیا گیا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

Social Media Auto Publish Powered By : XYZScripts.com